ArticlesIslam

کائنات کی کہکشائیں اربوں ستاروں پر مشتمل ہوتی ہیں اور ایسے ستارے آسمانوں کی زینت بنتے ہیں

The Lower Heavens, contemplate the galaxies of the universe such galaxies consist of billions of stars

نچلے آسمانوں سے کیا مراد ہے جن کا قرآن پاک میں ذکر ہے؟ اگر ہم کائنات کی کہکشاؤں پر غور کریں تو ہمیں معلوم ہوگا کہ ایسی کہکشائیں اربوں ستاروں پر مشتمل ہیں اور ایسے ستارے آسمان، آسمانوں کی زینت بنتے ہیں۔ لہٰذا یہ کہا جا سکتا ہے کہ  ہم اپنے اردگرد جتنے بھی ستارے اور کہکشائیں دیکھتے ہیں وہ آسمانوں کی حدود میں ہیں کیونکہ اللہ تعالیٰ نے قرآن پاک میں  ارشاد فرمایا ہے۔
فَقَضَاهُنَّ سَبْعَ سَمَاوَاتٍ فِي يَوْمَيْنِ وَأَوْحَى فِي كُلِّ سَمَاءٍ أَمْرَهَا وَزَيَّنَّا السَّمَاءَ الدُّنْيَا بِمَصَابِيحَ وَحِفْظًا ذَلِكَ تَقْدِيرُ الْعَزِيزِ الْعَلِيمِ (12: سوره فُصِّلَت‌ْ)
ترجمہ: پھر ان آسمانوں کو دو دن کے اندر سات آسمان بنادیئے اور ہر آسمان میں اس کے معاملہ کی وحی کردی اور ہم نے آسمان دنیا کو چراغوں سے آراستہ کردیا ہے اور محفوظ بھی بنادیا ہے کہ یہ خدائے عزیز و علیم کی مقرر کی ہوئی تقدیر ہے

مندرجہ بالا آیت میں روشنیوں سے مراد ستارے ہیں اور جیسا کہ ہم جانتے ہیں کہ ستارے شمسی گروپ سے باہر ہیں اور کرہ ارض میں ہمارے قریب ترین ستارہ 4.3 نوری سال کے فاصلے پر ہے یعنی جتنے بھی ستارے ہم دیکھتے ہیں وہ پہلے یا نیچے کے آسمانوں کو آراستہ کرتے ہیں۔ جہاں تک دوسرے آسمانوں کا تعلق ہے تو صرف اللہ تعالیٰ ان کی حدود کو جانتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button